تعلیم و صحتصحافت اور صحافی

لاہور میں شہری ڈینگی سے مر رہے ہیں لیکن ڈاکٹر یاسمین راشد کہتی ہیں کہ سب اچھا ہے

( مانیٹرنگ ڈیسک ) وزیر صحت پنجاب یاسمین راشد نے بالاخر ڈینگی کے حوالہ سے چپ کا روزہ توڑ دیا ہے اور دعوی کیا ہے کہ ڈینگی کے معاملات انکے کنٹرول میں ہیں حالانکہ گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران لاہور شہر میں ڈینگی کے 3 مریض جان کی بازی ہار چکے ہیں۔ یاسمین راشد کا شمار ان صوبائی وزرا میں سے ہوتا ہے جو اپنے تحکمانہ رویہ اور میڈیا مینجمنٹ کے لئے مشہور ہیں۔

الیکٹرانک میڈیا پر بھی الزام ہے کہ وہ یاسمین راشد سے ڈرتا ہے اور انکے بارے میں خبر بہت محتاط ہو کر دی جاتی ہے وہ خود بھی مختلف چینلز کے کرتا دھرتاوں سے رابطے میں رہتی ہیں اور انکے مزاج کے خلاف خبر دینے والوں کی وہ اچھی خبر لیتی ہیں۔

وزیر صحت پنجاب ڈاکٹر یاسمین راشد نے آج کی بریفنگ میں کہا کہ وہ اور انکے سیکرٹریز ہسپتالوں کے دورے کر رہے ہیں اور وہ خود ابھی جنرل ہسپتال لاہور کا دورہ کر کے آئی ہیں اور وہاں اب بھی ڈینگی کے مریضوں کے لئے 40 فیصد گنجائش موجود ہے۔

ڈاکٹر یاسمین راشد نے کہا کہ انہیں کورونا کی وجہ سے بھی کافی تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا کہ ہم اس وبا کو سنبھال نہیں سکیں گے اور ویکسین کا انتظام نہیں کر سکیں گے لیکن اللہ نے مہربانی کی اور ہم نے الحمد اللہ کورونا وبا پر قابو بھی پا لیا اور آج پنجاب اسمبلی میں ڈینگی کا خاص طور پر سیشن بلا لیا گیا ہے ہم سے پوچھ گچھ کرنے کے لئے۔

ڈاکٹر یاسمین راشد کی میڈیا مینجمنٹ کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ 99 روپے والا ڈینگی ٹیسٹ 2000 روپے میں کیا جا رہا ہے لیکن پنجاب کی جلالی وزیر کے سامنے کسی صحافی کی جرات نہیں ہوئی کہ اس متعلق سوال کر سکے۔

سرکاری ہسپتالوں میں علاج معالجے کی ناکافی اور ناقص صورت حال پر بھی کوئی خاص سوال جواب نہیں ہوئے البتہ ، ڈاکٹر یاسمین راشد نے بہت طمطراق کے ساتھ اپنے اوپر ہونے والی تنقید کا دفاع کیا۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button