ورلڈ اپ ڈیٹ

کالج میں نماز پڑھنے کا جرم ، بھارت میں پروفیسر کو گھر بھیج دیا

( مانیٹرنگ ڈیسک ) بھارت میں مودی سرکار کے راج میں انتہا پسندی عروج پر ہے ، مسلمانوں کے لیے حالات بد سے بدتر ہوتے جا رہے ہیں۔، بھارت کے شہر علی گڑھ کے کالج میں نماز ادا کرنے پر پروفیسر کو ایک ماہ کی جبری رخصت پر گھر بھیج دیا گیا ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق شری سرورشنے کالج سے پروفیسر ایس آر خالد کی ویڈیو وائرل ہوئی ، جس میں وہ کالج کے لان میں نماز ادا کرتے دکھائی گئے، جس کے بعد کالج انتظامیہ نے ان کے خلاف حکم سنایا۔

ویڈیو کے سامنے آتے ہی دائیں بازو کے ہندو نوجوانوں نے پروفیسر کے خلاف کارروائی کا مطالبہ شروع کر دیا، ایک انتہا پسند طالب علم کا کہنا تھا کہ پروفیسر کی جانب سے کالج کے اندر نماز ادا کرنا پرامن ماحول کو خراب کرنے کی کوشش ہے۔

اہم بہت لوگ سوشل میڈیا پر اس بات پر تنقید کر رہے ہیں، ان کا کہنا ہے کہ جب بھارت کے ہرر سکول کالج میں ہندو رسومات پر کوئی پابندی نہیں تو نماز ادا کرنے میں اتنا شو کیوں کیا جا رہا ہے۔

یاد رہے بھارت میں مسلمانوں کے خلاف ایک سوچی سمجھی سازش کے تحت مظالم کیے جا رہے ہیں، مسلمان طلبہ کو بھی بھارت میں حجاب پر پابندی کا سامنا ہے، جس کے خلاف ان کا احتجاج جاری ہے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button