افسر اور دفترتازہ ترینریاست اور سیاستوائرل لیکس

عمران خان کے ہارس ٹریڈنگ میں ملوث ہونے کی مبینہ آڈیو منظر عام پر

(مانیٹرنگ ڈیسک )چیئرمین پی ٹی آئی، سابق وزیرِ اعظم عمران خان کے ہارس ٹریڈنگ میں ملوث ہونے سے متعلق مبینہ آڈیو منظرِ عام پر آگئی، اس آڈیو میں عمران خان چالیں چلنے کا ذکر کر رہے ہیں۔

سامنے آنے والی اس تازہ آڈیو میں عمران خان کا کہنا ہے کہ آپ کی بڑی غلط فہمی ہو گئی ہے کہ جناب اب نمبر گیم پوری ہو گئی ہے، یہ نمبر ایسا ہے نہیں، ایسا مت سوچیں کہ سب ختم ہو گیا ہے۔

چیئرمین پی ٹی آئی کا آڈیو میں کہنا ہے کہ اب سے لے کر 48 گھنٹے is a long long time، اس میں بڑی چیزیں ہو رہی ہیں، میں اپنی طرف سے کئی چالیں چل رہا ہوں، جو ہم پبلک نہیں کر سکتے۔

آڈیو میں سابق وزیرِ اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ 5 تو میں خرید رہا ہوں، میرے پاس ہیں 5، میں نے میسج دینا ہے کہ وہ جو 5 ہیں نا وہ 5 بڑے اہم ہیں۔

انہوں نے اس آڈیو میں کہا ہے کہ اس کو کہیں کہ اگر وہ ہمیں 5 سیکیور کر دے نا وہ والا، 10 ہو جائیں گے تو یہ گیم ہمارے ہاتھ میں ہے۔

عمران خان کا آڈیو میں کہنا ہے کہ اس وقت قوم الارم ہوئی ہے، یعنی across the board لوگ چاہ رہے ہیں کہ کسی طرح ہم جیت جائیں، تو اس میں کوئی فکر نہ کریں کہ یہ ٹھیک ہے یا غلط ہے۔

لیک ہونے والی نئی آڈیو میں چیئرمین پی ٹی آئی کا یہ بھی کہنا ہے کہ کوئی بھی حربہ ہو، ایک ایک بھی کوئی اگر توڑ دیتا ہے تو اس سے بھی بڑا فرق پڑے گا۔

آڈیو لیک معاملے پر بنائی گئی کمیٹی کا پہلا اجلاس وفاقی وزیر داخلہ رانا ثناء اللّٰہ کی زیر صدارت آج ہوگا۔

اجلاس میں وفاقی وزراء، آئی بی، آئی ایس آئی کے نمائندے اور سیکریٹری کابینہ بھی شریک ہوں گے۔

کمیٹی سرکاری دفاتر پر سائبر حملے روکنے کیلئے سفارشات تیار کرے گی۔

وزیراعظم ہاؤس کی سائبر سیکیورٹی سے متعلق پروٹوکولز کا جائزہ بھی لیا جائے گا، 15روز میں سفارشات وزیراعظم کو پیش کی جائیں گی۔

دوسری جانب آڈیو لیکس کے معاملے پر وفاقی وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ کی سربراہی میں اعلٰی اختیاراتی کمیٹی کا پہلا اجلاس بدھ کو ہونا تھا۔

وزرات داخلہ کے ذرائع کے مطابق بدھ کو ہونے والا اجلاس چند ممبران کی ملک میں عدم موجودگی کی وجہ سے ملتوی ہو گیا تاہم کمیٹی کے ممبران اور اس کے ٹرمز آف ریفرنسز پر مشتمل نوٹی فیکیشن جاری کردیا گیا ۔

کمیٹی میں رانا ثنا اللہ کے علاوہ چار دیگر وزرا، ڈی جی آئی ایس آئی یا نمائندہ اور ڈی جی آئی بی کے علاوہ تکنیکی معاونین بھی شامل ہیں۔

نوٹی فیکیشن کے مطابق کمیٹی میں وزیر قانون اعظم نذیر تارڑ، وزیر موسمیاتی تبدیلی شیری رحمان، وزیر مواصلات اسعد محمود اور وزیر آئی ٹی امین الحق شامل ہیں۔

اس کے علاوہ پی ٹی اے، آئی ایس آئی، ایف آئی اے اور این ٹی آئی ایس بی کے تکنیکی ماہرین بھی کمیٹی میں شامل ہوں گے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button